News Media

براق علی عبید کو بچپن سے ہی بہت مصیبتوں اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑا- اس کا باپ ٹرک ڈرائيور تھا- اسے د ہشت گردوں نے مار ڈالا- براق اپنےدادا کے پاس رہنے لگی- پھر اس کے دادا کو  بھی مار د یا گیا- اس کے باپ کے خا ندان والوں نے عدالت میں جا کر براق اور اس کی پا نچ بہنوں کو تحويل ميں لے ليا- اس سے براق کی پریشا نيوں میں اور اضافہ ہو کيا- براق کی ماں نے ہمت نا ہاری اور عدالت ميں جا کر براق اور اس کی بہنوں کی تحوي

 

نزحت  أم بشرى البالغه من العمر ٣٥ سنة من بيتها ومدينتها تل لعفر مع الآلاف من العوائل حزيران الماضي عندما تعرّضت مدينتهم لهجوم الدواعش. عانت أم بشرى الكثير من المحن ولكن تعتبر نفسها محظوظه كونها استطاعت مغادرة المنطقة الحربية. تعتبر نفسها محظوظة لتحمّلها العطش والجوع والحر الشديد خلال فترة ال ٢٤ يوماً ماشية على أقدامها. شاهدت أم بشرى سفوط الكثير من الضحايا من الأهل والأصدقاء الذين لم يستطيعوا تحمّل ذاك الوضع المؤلم والمرهق للغاية. تسكن أم بشرى اليوم في مخيم النازحين وهي من اللّواتي يشكرن جهود وعناية مؤسسة الاغاثة والتنمية والمتبرعين لهذه المؤسسة لمساعدتها ومساعدة آلاف العوائل النازحة مثلها ب

 

خد يجہ کا تعلق شمالی عراق کے شھر تلافر سے ہے- وہ سولہ سال کی عمر ميں پناہ گزين ہو گئ- وہ اس سال گيارا کلاس ميں ہوتی- وہ ايک ہونہار طالب علم تھی اور اپنی تعليم جاری رکھنا چاہتی تھی- ليکن جون کے ماہ ميں د ہشت گردوں نے اس کے شھر پہ قبضہ کر ليا- اس کا بھائی د ہشت گردوں کے اس حملے ميں مارا گيا- اسے اپنے خاندان والوں کے ساتھ اپنا شھر چھوڑنا پڑا- اب وہ اپنے چوبيس خاندان والوں کے ساتھ پناہ گوين کيمپ ميں رہ رہی ہے

 

ليڈی فاطمہ چيريٹيبل ٹرسٹ فاؤنڈ يشن (ايل ايف سی ٹی)  غير منافع بخش دينی بنياد پر انسانی خدمت کی يو- کے ميں اين جی او ہے- اس کے تعاون سے ڈی آر ايف نے    800 سورج سے چلنے والی لاۂٹس اس کے پينلز اور دوسرے لوازمات جنوبی مارشلينڈ کے مقامی باشندوں ميں تقسيم کۓـ يہ مشترکہ کام صوبہ بصرہ اور نصيريا کے مارشلينڈ ميں ايل ايف سی ٹی کے مالی تعاون سے ڈی آر ايف  نے انجام د ياـ سامان کی تقسيم سے ان غريب خاندانوں کو فاۂدہ پہنچا جنہيں بجلی کی ضرورت تھی ـ ايک افسوس ناک بات يہ ہے کہ مارشلينڈ ميں رہنے والے شھری سھولتوں سے محروم ہيں ـ انھيں نہ صرف بجلی کی کمی ہے بلکہ پينے

 

I am a seventh grader at DRF's intermediate school. My name is Montathar Abed al-Rassol. My family and I lived in Diyalla, where my father worked and owned a shop. When I was child, I would spend a lot of time at his store. One day while I was sitting on his lap, a terrorist came into his shop and shot at us. My poor father was killed instantly, and I was injured. My mother remarried and moved to another city, so my three brothers and sister moved to Karbala to live with our uncle (may God bless him). He brought us to DRF’s school where the staff showed me tenderness and care.

 

Over 1.2 million Iraqis have been displaced. They have fled their homes with little to no possessions. Many have settle south of Baghdad. Thanks to its generous donors, Development and Relief Foundation has been able to provide some food, bedding, and most recently water, ice and thermoses. However, DRF would like to help more refugees and give more in-kind support. Below is a list of much-needed items. $1 will provide water for a family for a day. $25 will provide a food package for a family for a week. Donate generously at our donation page.

thermoses